پشاور۔16 جون(اے پی پی): وزیراعلیٰ خیبرپختونخوا محمود خان نے تمام صوبائی وزراءکو اپنے اپنے محکموں کی مجموعی کارکردگی کا ذمہ دار قرار دیتے ہوئے ہدایت کی ہے کہ وہ اپنے متعلقہ محکموں کی کارکردگی کا جائزہ لینے کے لئے باقاعدگی سے اجلاس منعقد کریں اور محکموں کی کارکردگی کو مطلوبہ سطح تک بہتر بنانے کے لئے نتیجہ خیز اقدامات کریں۔ انہوں نے کہا کہ تمام وزراءکو اپنے محکموں کے تمام معاملات میں مکمل اختیارات حاصل ہیں اس بنیاد پر وہ اپنے محکموں کی کارکردگی کے حوالے سے بھی جوابدہ ہیں۔

وزراءکے ساتھ ساتھ انتظامی سیکرٹریوں کو بھی بہتر کارکردگی کا مظاہرہ کرنا ہوگا تاکہ عوام کو بہتر خدمات کی فراہمی کو ممکن بنایا جاسکے۔ حکومت کی مجموعی کارکردگی کا دارومدارمحکموں کی انفرادی کارکردگی پر ہے جس کے لئے سب کو انفرادی طور پر کارکردگی دکھانی ہوگی۔ انہوں نے کہا کہ وہ خود دن رات کام کر رہے ہیں اور دوسروں سے بھی اسی چیز کی توقع رکھتے ہیں۔ وزیراعلیٰ نے وزراءکو مزید ہدایت کی ہے کہ وہ بجٹ سیشن کے فوری بعد اپنے اپنے حلقوں میں جاکر وہاں پر کورونا کی موجودہ صورتحال کے حوالے سے صحت کے شعبے کو مضبوط بنانے کے لئے حکومتی اقدامات کی خود نگرانی کریں۔ انہوں نے فیصلہ کیا ہے کہ بجٹ سیشن کے فوری بعد وہ خود بھی تمام محکموں کی کارکردگی کا جائزہ لینے کے لئے باقاعدگی سے اجلاس منعقد کریں گے۔ تمام محکموں کے سربراہان کو چاہئیے کہ وہ اپنے متعلقہ محکموں کی بہتر کارکردگی اور دی گئی ٹائم لائنز کے مطابق محکمے کے طے شدہ اہداف کے حصول کو یقینی بنائیں۔ خراب کارکردگی کا مظاہرہ کرنے والوں کے ساتھ کوئی رعایت نہیں برتی جائے گی۔

وہ منگل کے روز سول سیکرٹریٹ پشاور میں صوبائی کابینہ کے اجلاس کی صدارت کر رہے تھے۔ گندم کی خریداری کے حوالے سے محکمہ خوراک کی کارکردگی پر عدم اطمینان کا اظہار کرتے ہوئے انہوں نے واضح کیا کہ محکمے کی خراب کارکردگی کے ذمہ داروں کے خلاف سخت کاروائی عمل میں لائی جائے گی۔ وزیراعلیٰ نے اعلیٰ حکام کو ہدایت کی کہ مقامی طور پر گندم کی خریداری کے لئے کمشنرز اور ڈپٹی کمشنرز کو جو اہداف دئیے گئے ہیں ان اہداف کے حصول کو یقینی بنانے کے لئے تمام ضروری اقدامات اٹھائے جائیں۔ صوبائی وزراء، وزیراعلیٰ کے مشیر اور معاونین خصوصی کے علاوہ چیف سیکرٹری ، ایڈیشنل چیف سیکرٹری اور انتظامی سیکرٹریوں نے اجلاس میں شرکت کی۔ ٹھیکہ داروں کی طرف سے ترقیاتی منصوبوں کے ٹھیکے مقررہ ریٹ سے کم ریٹ پر حاصل کرنے اور پھر غیر معیاری کام کرنے کے معاملے پر وزیراعلیٰ نے اس مسئلے کا مستقل بنیادوں پر حل نکالنے کے لئے تمام تعمیراتی محکموں کے سربراہوں پر مشتمل ایک کمیٹی تشکیل دے کر اس حوالے سے ایک ہفتے کے اندر ٹھوس سفارشات پیش کرنے کی ہدایت کی۔ انہوں نے مزید ہدایت کی کہ سستے ریٹس پر ٹھیکے حاصل کرکے غیر معیاری کام کرنے والے ٹھیکہ داروں کو بلیک لسٹ کیا جائے اور ان کے لائسنس منسوخ کئے جائیں۔

وی این ایس، پشاور